True Translation of Verse 2:19 of The Quran

Tags

أَوْ كَصَيِّبٍ مِّنَ السَّمَاءِ فِيهِ ظُلُمَاتٌ وَّرَعْدٌ وَّبَرْقٌ يَجْعَلُونَ أَصَابِعَهُمْ فِي آذَانِهِم مِّنَ الصَّوَاعِقِ حَذَرَ الْمَوْتِ وَاللّهُ مُحِيطٌ بِالْكَافِرِينَ

Quran 2:18

Urdu|اردو

The above verse 2:19 starts with the conjunction “أَوْ” (aou) to mean ‘or’ and “كَصَيِّبٍ” (kasayyibin) is a compound of prefixed “كَ” (ka) to mean ‘as’, ‘like’, ‘such as’, ’as though’, ‘while’, ‘when’, and “صَيِّبٍ” (sayyibin) is derived of the Arabic root lettersص ب ب (Sad Ba Ba) means: fall, descend, outflow, collapse, fall down, throw downward, cast down, drop, discharge, and downgrade etc. Hence, “صَيِّبٍ” (sayyibin) correctly means ‘falling, ‘descending’, ‘collapsing’, ‘dropping’, ‘throwing’ etc. However, to hide the actual message of the Quran, in the false translation of Quranic verse 2:19 the word “صَيِّبٍ” (sayyibin) is falsely derived from a fake root word “صو ب” (Saoub) to mean ‘rain’, ‘cloud’ and ‘rainstorm’. As seen in the following mainstream false translations: “a cloud from the sky” (Free Minds), “a rain from the sky” (Literal, Tahir ul Qadri), “raining from the sky” (Ahmed Ali, Fateh Muhammad Jalandhary, Abul Ala Maududi), “a rain-laden cloud from the sky” (Yusuf Ali), “a rainstorm from the sky” (Pickthal, Saheeh, Khalifa, Hilali/Khan and QXP Shabbir Ahmed), “rain-laden cloud and rain” (Ghulam Ahmad Parwez).

You have seen the above translations in which all traditional and all Quranist scholars falsely translated the word “صَيِّبٍ” (sayyibin) of Quranic verse 2:19 to mean ‘rain, ‘cloud’ and ‘rainstorm’. Out of the bunch of liars Parwez brought both rain and cloud in his false interpretation of Quranic verse 2:19. Whereas, a layman knows that in Arabic language the word “مطر” (matar) is used to mean ‘Rain’ and Arabic words “غيم” (ghim), “غيمة” (ghimah) and “سحاب” or “سحابة” (sahabah) are used for cloud and rain-laden or rainy clouds respectively, and for both ‘clouds and rain’ the words “الغيوم والمطر” (al ghayum walmatar) are used in Arabic language.

On page 1638 of Edward William Lane’s Arabic lexicon a phrase “صب فی الوادی” is given with the reference of “Moḥkam” and “Kamoos” to mean ‘He descended into the valley’. Then another phrase “صب علیه نفسه” is quoted with the reference of “Asás” of Az-Zamakhshiri to mean He threw, himself upon him.

After “كَصَيِّبٍ” (kasayyibin) a preposition “مِّنَ” (min) is coming to mean ‘from’ and “السَّمَاءِ” (as samá) is a definite noun derived from root letters “س م ء” (Sen Mem Hamza) means very high up, glory, elevated, eminent, prominent (الرفعة) tower up, to be high, height, peak, the region of the atmosphere and outer space seen from the earth, status, proudness, arrogance, grace and the sky. Whereas, “فِيهِ” (fihi) means: in which, into, at, there, about, it, when, where, him, is in, of it, of him.

In the verse 2:19 the next word “ظُلُمَاتٌ” (zulumaatun) means darkness, shadow and also ignorance. The next word “رَعْدٌ” (rádun) is literally opposite to peace and correctly means trembling collision, war, clash, crash, noise, disturbance, tumult, agitation, hostility, disorder, exploding, terrifying, shivering, frightening and “رَعْدٌ” (rádun), to mean thunder or thunderbolt can be used only if definite article “ال” (al) comes before “رَعْدٌ” (rádun), e.g. “الرعد” (Al Rád) and lightning produces thunder as thunder does not become without lightning. Therefore, Arabic word “الرعد” (Al Raád) alone is used for thunder and lightning, thunderbolt or thunderstorm. Hence, according to the linguistic rules the word “رَعْدٌ” (rádun) of verse 2:19 cannot be taken to mean thunder or thunderstorm.

https://www.nssl.noaa.gov/education/svrwx101/lightning/faq/

With the reference of Taj al Aroos, in Lane’s Arabic Lexicon, “رَعْدٌ” (raád) is given to mean ‘frightened’ or ‘threatened’ and with reference of ‘Lisán al Arab’ and ‘Sihah’ the same word “رَعْدٌ” (rádun) is given to mean ‘be in a state of commotion’. Again, with the reference of ‘Lisán al Arab’ and Asás of Az-Zamakhshiri the word “رَعْدٌ” (rádun) is given in Lane’s Lexicon to mean affected with a tremor, quivering, quaking, shivering, or commotion. This is because “ارتعاد” (artád) is extensively used to mean being a cause of trembling and agitation.

The word “برق” (BRQ) signifies catch the light and lightened as seen on the page190 of Lane’s lexicon the phrase “برقت السماء” is quoted with reference of Sihah, Miṣbáḥ of Al-Faiyumi and Kamoos, to mean ‘the sky lightened’. According to Arabic Lexicon Jámi of Al Karmáni, Ibn Abbad and Kamoosبرق” (BRQ) means showed, presented or exhibited and in support of their meaning they have quoted a phrase “ابرقت عن وجہہا” to mean she showed her face. With reference of Sihah and Kamoos, “برق” (BRQ) is glistened and eye opening or eyes became dazzled, so as not to close, or move, the lid, or lids or became confused, so as not to see. Then with the reference of AI Farrà, Kamoos and Taj al Aroos the same word “برق” (BRQ) is given to mean frightened, feared or afraid and Al Aṣmai together with Kamoos, Jámi of Al Karmáni and Obáb of Aṣ-Ṣagháni mentioned that “برق” (BRQ) means affected by the heat as butter melted and decomposed or glisten or catch the light and according to Ibn Abbásبرق” (BRQ) means seeing the fire, or a whip of light and flash of lightning. On page 191 of the same Arabic lexicon of Lane “بارقه” is given to mean swords, with reference of Sihah, Kamoos and Taj al Aroos and with reference of Jámi of Al Karmáni and page 306 of Exposition of the Ḥamáseh by At Tabreziبوراق” (buraq) is a plural word which is applied to swords and other weapons. A phrase “الجنت تحت البارقه” to mean paradise is beneath the swords is given with reference of Jámi of Al Karmáni and Taj al Aroos, whereas, Jámi of Al Karmánialso added meaning in the cause of God. Another Arabic saying “رایت البارقه” is quoted with reference of Al Liḥyáni and Taj al Aroos to mean ‘saw the shining or glistening of the weapons’. With the reference of Taj al Aroos and Kamoos it is also added that “ابارقه” means sword such as is termed “براق” (buraq). Then Kuráạ, the author of the “Munjid” and Sihah added that a sword that shines, gleams, or glistens, much or intensely and Jámi of Al Karmáni said simply a sword.

However, Persian word “برق” (barq) is taken to mean electric and lightning. It is interesting that in the above research in classical sources of Arabic language we have found that Arabic word “براق” (buraq) means sharp sword. It means that actually “براق” (buraq) was the sword of the Prophet that was made an electric flying horse “براق” (buraq) by Zoroastrian Persian Imams of early Islam who made the Prophet sit on the said electric horse “براق” (buraq) and sent him on Meráj (معراج) to incorporate 5 times a day Zoroastrian contact prayers (Namaz) into Islam. Anyway, “براق” (buraq) is an active participle of “بَرْقٌ” (barq). In this sense, the Arabic word “بَرْقٌ” (barq) is not electricity or electric like the Persian word “برق” (barq) is used to mean electric but the Arabic “بَرْقٌ” (barq) is a sharp instrument, weapons of mass destruction, firearms, sparks of collision, flaming swords and a whip of light. In Arabic, electric is called “الكهرباء” (Al-Kharba) and in Persian electric is knows as “برق” (barq).

Having seen the meaning of words “رَعْدٌ وَّبَرْقٌ” (rádunwabarq) given in classical legendary Arabic dictionaries you will understand that although the words “رَعْدٌ وَّبَرْقٌ” (rádunwabarq) are traditionally taken to mean thunder and lightning by some scholars but majority of well-known scholars and well-known classical Arabic Lexicons and legendary sources of Arabic literature do not take the words “رَعْدٌ وَّبَرْقٌ” (rádunwabarq) to mean thunder and lightning but a trembling collision, a shivering commotion, a crashing threat and sparking atmosphere of killing weapons or sharp glistening or blazing sword. This is because as a common linguistic rule the definite article “ال” (al) is used before a noun to show that you are talking about a particular thing that is already known or is the only one like known natural phenomena of thunder or lightning, like we use “the” in English literature. Arabic language follows the same linguistic rules and in fact Arabic language is much strict in following the rules of language for its inherited perfection. Therefore the words “رَعْدٌ وَّبَرْقٌ” cannot be used to mean “thunder and lightning” but destructive war, trembling collision, terrifying confrontation and sharp edged glistening swords, flame whips and flame spewing dangerous weapons. In addition, modern day and future firearms will also come to mean “بَرْقٌ” (barq) and modern day and future armed warfare will also be called “رَعْد” (rád).

So, when their arrogance collapsed they fell into ignorance, darkness or shadows (أَوْ كَصَيِّبٍ مِّنَ السَّمَاءِ فِيهِ ظُلُمَاتٌ) of trembling collision, howling commotion, up roaring or frightening atmosphere (وَّرَعْدٌ) and terrifying spark of sharp glistening weapon, swift glistening sword and sudden flash of blazing spark (وَّبَرْقٌ).

The next compound “يَجْعَلُونَ” (yajaluna) means “they make” and “أَصَابِعَهُمْ” (asabiá hum) is a compound of “أَصَابِعَ” (asabiá), a derivative of “صبع” (Sad Ba Ain) and third person plural objective pronoun “هُمْ” (hum). On page 1646 of Lane’s Lexicon, with the reference of Abu Zeyd, Sihah and Kamoos, the word “صَبَعَ” is given to mean ‘he pointed at him, or towards him, with his finger’. They also quoted that “بأَصبَعِهِ” means disparagingly. That means they took “صَبَعَ” to mean to belittle or degrade a person or idea and disparage which is a specific way to describe a certain kind of insult, and despairing and hopelessness. Then with reference of Sihah and Kamoos a phrase “صبع فلاناً علی فلانِ” is quoted to mean ‘He directed such a one to such a one by pointing or indication’. With reference of Taj al Aroos and Kamoos a phrase “صبعه الشیطان” is quoted to mean ‘The Devil has directed him. However, with so many twists and turns the said lexicon repeats its statements of taking “صَبَعَ” and its derivatives to mean, directed, indicated and pointed out. Hence, the word “أَصَابِعَ” of 2:19 correctly means direction, indication and point out but our scholars translate “أَصَابِعَ” to means fingers. However, according to the linguistic rule the definite article “ال” (al) is used before organs and limbs. Therefore, had the Quran wanted to say ‘fingers’ it would have been “الأصابع” but as you can see in the phrase “أَصَابِعَهُمْ” of verse 2:19 the word “أَصَابِعَ” is coming without the definite article (ال) that is why the phrase “أَصَابِعَهُمْ” cannot be translated to mean “fingers”.

The preposition “فِي” (fi) to mean in, into, at and across, is coming next and the phrase “آذَانِهِم” (Aazani him) is a combination of third person plural objective pronoun “هِم” (him) to mean ‘their’, and “آذَان” (Aazan) means ‘warrants’, ‘declarations’, ‘proclamation’, ‘announcements; ‘leaves’, consent and call for since the word “آذَان” (Aazan) is a synonym of Arabic word “نادی” (nadi) and “آذَان” (Aazan) is also used to mean, admittance, approval, indulge, sanction, endorsement, acknowledgement and stamp as seen in Arabic phrase “إذن شراء” or “إذن استلام” to mean Trading Stamp [General meaning]. Whereas,”تَأَذَّن” means be informed, learned and declared.

In fact “آذَان” (Aazan) is coming in the continuity of the word “عُمْيٌ” (umyun) of previous verse 2:18 in which “عُمْيٌ” (umyun) was used to assemble and publicize or spread in public their false views, i.e. making “عام” (aam) their voice that was their “اعلان“, i.e. proclamation and publically declaration which is actually “آذَان” (Aazan) that becomes there death warrant in the direction in which they direct themselves. If the letter alif at the beginning of the word “آذَان” (Aazan) had not been pronounced long with “آ” (alif maddah), i.e. aa sound and it had been with the definite article then it could have been taken to mean “ears” but the word “آذَان” (Aazan) of the phrase “آذَانِهِم” (Aazani him) of Quanic verse 2:19 is the same “آذَان” (Aazan) which is called five times a day from every mosque. Therefore, the correct meanings of the word “آذَان” (Aazan) of the phrase “آذَانِهِم” (Aazani him) of Quanic verse 2:19 are ‘call’, ‘declaration’, ‘public announcement’, ‘statement’ and ‘warrant’, which is as if the word “عُمْيٌ” (umyun) in the previous verse 2:18 of Surat al-Baqarah was used to publicize their voice, and the word “آذَان” (Aazan) in the next verse 2:19 also comes in the same context that what they had collected and made public (عُمٌيٌ) that is “آذَانِهِم” (Aazani him) which is their own statement, their own voice, their own declaration, their own call and their own warrant.

Nevertheless, all Quranist and traditional scholars, and translators of the Quran translate the phrase “آذَانِهِم” (Aazani him) to mean ‘their ears’ but they don’t know that ears are organs which cannot come without having the definite article (ال) before them. Moreover, they perhaps never looked at the construction of the said Quranic word “آذَان” (Aazan) nor did they observe its sound with prolonged alif in the beginning which is coming with a tilde over it like “آ” (Aa). This is not “اذان” (Azan) but “آذَان” (Aazan) which they broadcast 5 times a day to call people for their pagan congregations. How hypocrite they are, when they use “آذَان” (Aazan) to call for their pagan congregations they take it to mean a declaration, a proclamation, a call and a warrant but when they find the same word “آذَان” (Aazan) in the Quran they ruthlessly distort it and absurdly translate it to mean ‘ears’ ???

Curse on those hypocrite pagans who invent lies and the Quran and curse on their blind supporters who support their infidelity.

Some dogmatic prisoners argue that the Quran does not care about linguistic rules and writing of the Quran is free from linguistics. They are actually saying whoever wrote the Quran he did not know the language. Some idiots argue that the Quran contains the words of Persian or foreign languages other than Arabic and the meaning of Arabic words have changed over time. They are really thick people who have no knowledge of the Quran which itself states “وَلَوْ جَعَلْنَاهُ قُرْآنًا أَعْجَمِيًّا لَّقَالُوا لَوْلَا فُصِّلَتْ آيَاتُهُ أَأَعْجَمِيٌّ وَعَرَبِيٌّ” (41:44) ” And if We made it a non-Arabic/Persian Koran , they would have said: “If only its verses were detailed/explained . Is (it) a non-Arabic/Persian (Koran) and an Arab (messenger)?” “(Translation by Literal, verse 41:44). ” And if We had made it a Quran in a foreign tongue, they would certainly have said: Why have not its communications been made clear? What! a foreign (tongue) and an Arabian!” (Translation by Saheeh verse 41:44).

The only error in the above translation is that Literal added the word “messenger” which is not a part of Arabic text and both Literal and Saheeh have some minor errors but one can clearly understand from their translations that the Quran was not made in any language other than Arabic and not any foreign language such as Persian etc. is mixed in the Arabic text of the Quran. The words “أَعْجَمِيًّا” and “أَعْجَمِيٌّ” are particularly used to mean Persian language and also for foreign or other than Arabic languages. This is because “عْجَمِيٌّ” (ajmi) were particularly called to Persian since Persia was called “عجم” (Ajam). So, those ignorant who claim that the Quran uses the words of Persian and other languages along with Arabic they should refresh their knowledge in the light of the above verse of the Quran 41:44. If the Quran was revealed in the language other than Arabic, people would make excuse of not understanding the Quran. Therefore the Quran was made in plain Arabic language so that everyone can clearly understand the message of the Quran. Regarding the myth of occurring the overtime change in the meaning of the words of the Quran or in the meaning of Arabic words I have already explained in my numerous articles that Arabic or Quranic words are derived from their root words and the meaning of Arabic root words are same as they were used when the Quran was revealed and even before the revelation of the Quran. This is the beauty of Semitic languages that time does not effect on their root meaning. However, non-Semitic languages are definitely changed overtime as their words are not derived from the root words like Semitic languages. Therefore, before jumping into any baseless arguments they should check their knowledge and avoid bombardment of false references and useless comments.

Anyway, to invent the fingers and the ears in the false translation of verse 2:19 our infidel scholars invented following lies in the translation of these Quranic words “يَجْعَلُونَ أَصَابِعَهُمْ فِي آذَانِهِمThey place their fingers in their ears (Free Minds 2:19), They press their fingers in their ears (Yusuf Ali), They thrust their fingers in their ears (Pickthal, Hilali/Khan), They put their fingers in their ears (Literal, Saheeh, Asad, Khalifa, Tahir ul Qadri, Fateh Muhammad Jalandhary, Abul Ala Maududi, Parwez), They plug their ears with their fingers (QXP Shabbir Ahemd),

In the aforementioned false translations the liars have used the words “place”, “press”, “thrust”, “put” and “plug” to insert their fingers in their ears but in this Arabic text “يَجْعَلُونَ أَصَابِعَهُمْ فِي آذَانِهِم” of verse 2:19 you cannot find any word which can be translated to mean place”, “press”, “thrust”, “put” or “plug”!

In fact all perverted scholars of the Quran have distorted the word “يَجْعَلُونَ” and took its verb “يَجْعَل” (yajál) to mean “place”, “press”, “thrust”, “put” and “plug”!

Where are the blind native Arabs and hypocrite language experts who know very well that the verb “يَجْعَل” (yajál) of “جعل” (jál) cannot be taken to mean “place”, “press”, “thrust”, “put” and “plug”?

Even a layman knows that “جْعَل” refers to make something.

Those false believers must look at the above forgery in the translation who always pass their sarcastic remarks and reiterate as to how it is possible that no one came in the past 1400 years to rectify the translation of the Quran and how the translation of the Quran can be wrong if the Arab natives are still there who read the Quran day and night, since Arabic is their mother tongue !

Yes Arabic is their mother tongue or they are expert in Arabic but they don’t bother what is written in the Quran because the Quran is not a book of pagans. This is the reason why native Arabs and scholars of religion of Islam hide and distort the message of the Quran.

Coming back to the analysis of the verse 2:19 in which the Preposition “مِّنَ” (min) is coming next to mean “of” and the next word “الصَّوَاعِقِ” (as sawaiq) is the active participle of “صعق” (SÁQ) means fall dead, faint, stun, wear out, electrocute (kill by electric shock), to faint, to fall dead, to wither to shock, since “صاعقه” (saiqa) is a killing device like a Zapper. On page 1690 of google pdf of Lane’s Arabic lexicon, with reference of Sihah, Kamoos and Obáb of Aṣ Ṣagháni the word “صعق” (SÁQ) and its noun “صاعقه” (saiqa) are given to mean “smote” that is actually smite means to strike or hit hard, with or as with the hand, a stick, or other weapon, to affect mentally or morally with a sudden pang, e.g. His conscience smote him or to affect suddenly and strongly or they were smitten with terror, a heavy blow or stroke with a weapon or the hand. Also, with the reference of Al Baḍáwi’s Exposition of the Quran, Sihah and Taj al Aroos the same word “صعق” (SÁQ) means ‘die’, ‘fall down’, ‘dead’ and ‘death’, and again with the reference of Taj al Aroosاصعقه” is given to mean He or it killed or slew him.

Therefore, the word “الصَّوَاعِقِ” (as sawaiq) of Quranic verse 2:19 is actually the swift killer, the rapid killing weapon and the sharp killing sword.

https://en.wiktionary.org/wiki/%D8%B5%D8%B9%D9%82

The next word “حَذَرَ” (hazar) means warned, admonished, cautioned, being aware, careful, alert, cautious, apprehended, understood, looked out, having or showing caution, careful to avoid danger, guarded, paid attention, heedful. Since “تحذيرات” (tahzirat) means advisory or warnings therefore, in Arabic “Road Warnings” are called “تحذيرات الطريق“. Whereas, “الْمَوْتِ” means the death or the doom and “وَاللّهُ” means ‘and God’. The next word “مُحِيطٌ” (muheet) means set down, overall, around, circle, surround. The circle is a universal symbol with extensive meaning. It represents the notions of totality, wholeness, original perfection, the Self, the infinite, eternity, timelessness, all cyclic movement. Hermes Trismegistus found in ancient sacred texts that God is a circle Whose centre is everywhere and Whose circumference is nowhere. The last phrase of the verse 2:19 “بِالْكَافِرِينَ” (bil kafireen) means with the concealers.

Word for word correct translation of Quranic verse 2:19 is as follows.

@page { size: 8.5in 11in; margin: 0.79in } p { margin-bottom: 0.1in; direction: ltr; line-height: 115%; text-align: left; orphans: 2; widows: 2; background: transparent } a:link { color: #0000ff; text-decoration: underline }

أَوْ كَصَيِّبٍ مِّنَ السَّمَاءِ فِيهِ ظُلُمَاتٌ وَّرَعْدٌ وَّبَرْقٌ يَجْعَلُونَ أَصَابِعَهُمْ فِي آذَانِهِم مِّنَ الصَّوَاعِقِ حَذَرَ الْمَوْتِ وَاللّهُ مُحِيطٌ بِالْكَافِرِينَ

“Or as falling from the sky into darkness and a trembling collision and a terrifying blazing spark they make their direction in their warrants of the death warned shocking killer and God is surrounded with the concealers”

Word for word correct translation of Quranic verse 2:19

“Or as falling from the arrogance at shadows of a trembling collision and a sharp sparking sword they turn towards their declarations of the death warned sharp killer and God is around the concealers”

Original classic correct translation of the verse 2:19

“Or as falling from the arrogance into ignorance and a trembling collision and a terrifying blazing spark they make their way towards their declarations of the death notified sharp killing weapon and God is around the concealers”

Modern correct translation of the verse 2:19

“Or as falling from the arrogance at shadows of a trembling collision and a frightening firearm they turn towards their declarations of the death cautioned sharp killing weapon and God is around the concealers”

Advance correct translation of the verse 2:19 which can be understood by future generations

Regards,

Kashif Khan

The same article in Urdu is underneath for Urdu readers.

أَوْ كَصَيِّبٍ مِّنَ السَّمَاءِ فِيهِ ظُلُمَاتٌ وَّرَعْدٌ وَّبَرْقٌ يَجْعَلُونَ أَصَابِعَهُمْ فِي آذَانِهِم مِّنَ الصَّوَاعِقِ حَذَرَ الْمَوْتِ وَاللّهُ مُحِيطٌ بِالْكَافِرِينَ

Quran 2:18

سورۃ البقرۃ کی بالائی آیت 2:19 حرف ِ عطف “أَوْ“سے شروع ہوتی ہے جو اس سے پہلی آیت 2:18 کے بیان کے تسلسل میں زیر نظر آیت کے بیان کو اس انداز سے آگے بڑھا رہا ہے کہ بصورت دیگر یا اس طرح جہالت پھیلانے کا جو نتیجہ نکلتا ہے ۔گویا “أَوْ” یا اور بصورت دیگر کے معانی میں آرہا ہے اور اس سے اگلے لفظ “كَصَيِّبٍ“کے شروع میں آنے والا “كَ“جیسے ، جیسا کہ ،اس طرح ، ایسے ، جب، اور جبکہ کے معانی دیتا ہے اور “صَيِّبٍ“عربی کے بنیادی حروف ص۔ ب ۔ب سے ماخوذ ہے جس کا مطلب ہے نیچے گر نا، نیچے اترنا، کسی مقام سے گرنا ، نیچے پھینکنا وغیرہ۔ تاہم حسب ِ عادت قرآن مجید کے حقیقی بیان کو چھپانے کے لئے تمام قرآنی اور روایتی علمائے کرام اور مترجمین حضرات نے مزکورہ قرآنی لفظ”صَيِّبٍ” کو جھوٹے بنیادی لفظ “صو ب“سے اٹھا کر”صَيِّبٍ” کا جھوٹہ ترجمہ بارش ، بادل ، بارش کا طوفان اور مینہ برسانے والا بادل گھڑدیا۔ “یا جیسا کہ آسمان سے بارش ہو” (ترجمہ احمدعلی)، “ا ان کی مثال مینہ کی سی ہے کہ آسمان سے (برس رہا ہو اور) ” (فتح محمد جالندھری)

“یا ان کی مثال اس بارش کی سی ہے جو آسمان سے برس رہی ہے” (طاہرالقادری)، “یا پھر ان کی مثال یوں سمجھو کہ آسمان سے زور کی بارش ہو رہی ہے” (ابوالاعلیٰ مودودی)، “ایسی ہے جیسے وقت پر مینہ برسانے والا بادل” (پرویز)۔

قارئین ِ کرام آپ نے بالائی سطور میں نقل کئے ہوئے تراجم دیکھ کر اس بات کا بخوبی اندازہ لگا لیا ہوگا کہ ہمارے قرآنی اور روایتی علماء نے اپنے مکروہ تراجم میں کیسا کیسا جھوٹ گھڑ رکھا ہے ۔پرویز صاحب نے تو جھوٹ گھڑنے میں اس قدر حد کردی کہ قرآنی لفظ “صَيِّبٍ“کے جھوٹے معانی میں مینہ ، بادل اور برسنے والا سب کچھ گھڑ دیا تاکہ جھوٹ میں کسی قسم کی کوئی کمی نہ رہ جائے۔جبکہ عربی زبان کا ایک معمولی طالب علم بھی یہ جانتا ہے کہ بارش کو عربی میں”مطر” کہا جاتا ہے اورمینہ برسانے والے اور عام بادلوں کو بالترتیب “غيم“،”غيمة“،”سحاب” اور”سحاب” کہا جاتاہے اور بارش اور بادل دونوں کے لئے “الغيوم والمطر“کے الفاظ استعمال ہوتے ہیں۔

بہرحال جو لوگ راقم الحروف کی تحقیق سے مطمئن نہیں ان کی تسلی و تشفی کے لئے ایڈورڈ ولیم لین کی معجم اور عربی زبان کی دیگر لغات کے حوالے بھی موجود ہیں ۔ لین کی معروف معجم کے صفحہ 1638 پر محکم اور قاموس کے حوالوں کے ساتھ عربی کا جملہ”صب فی الوادی” دیا گیا ہے جس کے معانی “وادی میں اترنا بتائے گئے ہیں ۔”صب فی الوادی“میں آنے والا فعل “صب“بھی “صَيِّبٍ“کی طرح عربی زبان کے بنیادی حروف ص۔ ب ۔ب سے ہی ماخوذ ہے ۔ فرق صرف یہ ہے کہ “صَيِّبٍ“کے حروف ص اور ب کے درمیان ی کا اضافہ”صَيِّبٍ” کو گرنے والا یا گرنے والے بنارہا ہے ۔بالکل اسی طرح جیسے “رحم” سے “رحیم” بنتا ہے اور “غم” سے “غیم” بنایا جاتاہے جو برسنے والے بادل کے معانی میں آپ بالائی سطور میں ملاحظہ فرماچکے ہیں۔ اس کے بعد لین کی معجم کے اسی صفحہ 1638 پر الزمکشری کی معروف کتاب اساس کے حوالے سے بھی ایک عربی جملہ “صب علیه نفسه” نقل کیا گیا ہے اور اس جملے “صب علیه نفسه“کے معانی “اس نے اپنے آپ کو اس پر پھینکا” دیئے گئے ہیں ۔ گویا “صَيِّبٍ” والا وہی “صب” ییاں پر “پھینکنے” کے معانی میں لیا گیا ہے ۔لہٰذا ہمارے زیر مطالعہ سورۃ البقرۃ کی آیت 2:19 کے مرکب “كَصَيِّبٍ“کے لفظ “صَيِّبٍ“کے درست معانی گرنا، اترنا اور پھینکنا ہی ہیں۔ اس کے بعد “س م ء” کے بنیادی حروف سے ماخوذ ہونے والا اسم معروف “السَّمَاءِ“آرہا ہے جو قرآن مجید کے تراجم میں آنکھ بندکرکے تصریفِ آیات کی مدد سے ہر جگہ “آسمان” کے معانی میں لیا جاتا ہے۔ جبکہ حقیقت یہ ہے کہ عربی ادب میں “سَّمَاءِ ” اپنے سیاق و سباق کے حوالے سے بہت سے معانی میں استعمال ہوتا ہے۔ مثلاً، بلندی ، کرۃ الارض کا ماحول یعنی آسمان، اردگرد کا ماحول ،غرور اور تکبر کی علامت ، کسی کانام ، جاہ و جلال ، مرتبہ، رتبہ اور شان و شوکت ۔عربی کا مشہور لفظ “اسم ” یعنی نام اور اس کی جمع “اسماء ” بھی “س م ء” کے بنیادی حروف سے ہی ماخوذ ہیں۔ گویا نام، شان و شوکت ، بلندی ، رتبہ، حیثیت، غرور، تکبر، اونچی اڑان، کرۃ الارض کا ماحول یعنی اصطلاحاً آسمان “سمأ“کے معانی میں ہی آتے ہیں اور ادادۃ التعریف یا صیغہ ِ معروف یعنی “ال“کے ساتھ آنے والا لفظ “السَّمَاءِ” ترجیحاً کرۃ الارض یا زمین کے ماحول یعنی آسمان کے لئے استعمال کیا جاتا ہے مگر یہی “السَّمَاءِ“سیاق و سباق میں آنے والے معروف ، جانے پہچانے یا پہلے سے مزکور اسم کے لئے بھی استعمال ہوتا ہے جس میں پہلے بیان سے چلے آنے والے لوگوں کا تکبر ، ان کا نام ِ نامی ، ان کی شان و شوکت ، ان کی حیثیت اور ان کا پہلے سے معلوم مقام بھی “السَّمَاءِ“کے معانی میں ہی آئے گا۔ لہٰذا “كَصَيِّبٍ مِّنَ السَّمَاءِ” آسمان سے نیچے گرنے کے لفظی معانی کے ساتھ ساتھ ان کی ساکھ کو دھچکہ لگنے، مقام سے نیچے گرنے، نام خراب ہونے، تکبر خاک میں ملنے، عزت و ناموس کی دھجیاں بکھرنے ، غرور مٹی میں ملنے اور نیچا ہونے کے ادبی معانی میں بھی استعمال ہوتا ہے۔ یعنی جہاں سیاق و سباق میں کرۃ الارض کے ماحول سے متعلقہ بات ہورہی ہو “السَّمَاءِ “کے معانی بطور آسمان صرف وہیں آئیں گے ورنہ السَّمَاءِ اپنے سیاق و سباق کے حوالے سے اپنے معانی دے گا۔ “فِيهِ“کے معانی ہیں : میں، جس میں ، اس میں ، کے بارے میں ، جب ، کہاں اور اس میں سے ۔ اس سے اگلے لفظ “ظُلُمَاتٌ“کے معانی ہیں تاریکی ، سایہ ، جہالت اور جہالت کی تاریکی ۔”رَعْدٌ” امن کا متضاد لفظ ہے جس کے معانی ہیں بدامنی،تصادم، فساد، جنگ، جھگڑا، شورش، شور ، پریشانی ، ہنگامہ آرائی ، اشتعال انگیزی ، عداوت ، خرابی ، دھماکے سےپھٹ جانا ، خوفناک ، لرز اٹھنا ، خوفزدہ ہونا اور کانپنا۔اگر “رَعْدٌ” کو صرف بادلوں اور آسمانی بجلی کی گرج چمک کے لئے لینا مقصود ہوتا تو یہی لفظ ادادۃ التعریف کے ساتھ “اَلرَعْدٌ” کی معروف شکل میں آتا ۔لہٰذا “رَعْدٌ” کو کسی بھی قاعدے سے بادلوں یا آسمانی بجلی کی گرج نہیں لیا جاسکتا بلکہ تصادم، فساد ، جنگ ، اشتعال انگیزی ، عداوت اور جنگی ہتھیاروں کی گرج کہا جاسکتا ہے۔ بارش اور بادل کے طوفان کی گرج ایک فطری گرج ہے جس کے اظہار کے لئے صیغہ معروف کے بغیر “رَعْدٌ” استعمال نہیں ہوتا۔

ایڈورڈ ولیم لین کی عربی معجم کے صفحہ 1105 پر تاج العروس کے حوالے کے ساتھ”رَعْدٌ” کے معانی خوف ذدگی اور دھمکی آمیز دئیے گئے ہیں اور اس کے ساتھ ہی صحاح اور لسان العرب کے حوالوں کے ساتھ یہی لفظ “رَعْدٌ“ہیجان، اضطراب، شورش اور ہنگامہ کے معانی میں دیا گیا ہے اور پھر لسان العرب اور الزمکشری کی معروف تصنیف اساس کے حوالوں کے ساتھ”رَعْدٌ” کو زلزلے ، لرزنے ، کانپنے، یا ہنگامے سے متاثر کرنے کے معانی میں لیا گیا ہے ۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ “ارتعاد” کو اشتعال اور کپکپاہٹ کے معانی میں لیاجاتاہے۔

دیگر قدرتی مظاہر کی طرح “برق“بھی اگر آسمانی بجلی کے لئے استعمال کیا جاتا تو ادادۃ التعریف کے صیغہ “ال” کے ساتھ اسم معروف کی شکل میں آتا اس لئے عربی زبان کے قائدے کی رو سے “برق“کو آسمانی بجلی کے معانی میں نہیں لیا جاسکتا۔ایڈورڈولیم لین کی معجم کے صفحہ 190 پر الفیومی کی مصباح، صحاح اور قاموس کے حوالوں کے ساتھ “برقت السماء“کا جملہ روشن آسمان یا چمکتے ہوئے آسمان کے معانی میں دیا گیا ہے۔ اس کے بعد”برق” کو روشن، دکھائی دینے، کسی شے کو ظاہر کرنے، پیش کرنے اور نمائش کرنے کے معانی میں دیا گیا ہے اور “برق“کے بالائی معانی کو درست ثابت کرنے کے لئے عربی زبان کا ایک جملہ “ابرقت عن وجہہا”اس عورت نے اپنا چہرہ ظاہر کیا کے معانی میں دیا گیا ہے۔ اس کے بعد صحاح اور قاموس کے حوالوں کے ساتھ “برق” کو چمکیلی، آنکھیں کھولنے اور آنکھیں چندھیا جا نے کے معانی میں دیا گیا ہے جس میں نہ آنکھیں بند ہوں ، نہ آنکھوں کی پتلی حرکت کرے اور بوکھلاہٹ میں کچھ دکھائی نہ دے۔ پھر الفراء ، قاموس اور تاج العروس کے حوالوں کے ساتھ “برق” کو خوف اور خوف زدگی کے معانی میں دیا گیا ۔ جس کے بعد الأصمٰعي ، الکرمانی کی جامی اور قاموس کے حوالوں کے ساتھ “برق” کے معانی گرمی سے متاثر شدہ جیسے مکھن پگھلا ہوا اور ریزہ ریزہ ہونا، چمکنا یا روشنی کو پکڑنا دیئے گئے ہیں۔ اس کے ساتھ ہی ابن عباس کے حوالے سے “برق“کے معانی آگ دیکھنا، بجلی، چمک اور چمک کا کوڑا دئیے گئے ہیں۔لین کی اسی معجم کے اس سے اگلے صفحے یعنی صفحہ 191 پر صحاح اور قاموس کے حوالوں سے “بارقه” کو تلواروں کے معانی میں دیا گیا ہے جبکہ تاج العروس، جامی اور تبریزی کے قرآنی بیان کے حوالوں کے ساتھ “بوراق“کو تلواروں اور دیگر ہتھیاروں کی جمع کے لفظ کے معانی میں دیا گیا۔ اس کے ساتھ ہی لین کی معجم کے اسی صفحہ 191 پر تاج العروس اور جامی کے حوالوں کے ساتھ عربی زبان کا جملہ “الجنت تحت البارقه” یعنی “جنت تلواروں کے تلے ہے “کے معانی میں دیا گیا ہے۔ اس کے بعد اللحیانی اور تاج العروس کے حوالوں کے ساتھ ایک اور عربی جملہ”رایت البارقه” یعنی “ہتھیاروں کی چمک اور چنگاریاں دیکھنے” کے معانی میں دیا گیا ہے۔ یہاں پر تاج العروس اور قاموس نے اس بات کا اضافہ کیا کہ “ابارقه“کے معانی وہ تلوار ہے جس کو”براق” کہا جاتا ہے۔ پھر صحاح اور عربی کی معروف لغت منجد کے حوالوں سے بھی چمکتی ہوئی تلوار کو “براق” کہا گیا ہے ۔اگر غور فرمائیں تو “براق” دراصل”برق” کا اسم الفعل ہے ۔ اس لحاظ سے عربی کے لفظ “برق” کے معانی فارسی کے لفظ “برق” کی طرح بجلی نہیں بلکہ تیز آلہ ، تباہی والے ہتھیار ، آتشیں ہتھیار، چنگاریاں اگلتی ہوئی تلوار اور چمکتا ہوا کوڑا ہیں۔عربی میں بجلی کو “الكهرباء” کہا جاتا ہے اور فارسی میں “برق” ۔یہی وجہ ہے کہ فارسی کا لفظ برق اردو زبان میں بھی بجلی کے معانی میں استعمال ہوتا ہے۔ جیسے برقی توانائی اور برقی پنکھے وغیرہ۔

بالائی تحقیق سے ہمیں عربی کے لفظ “برق” کے اصل معانی معلوم ہونے کے ساتھ ساتھ یہ بھی معلوم ہوگیا کہ نبؐی کی تلوار یعنی “براق” کو فارس کے زرتشی اماموں نے بگاڑ کے بجلی کا آسمانی گھوڑا بنایا اور پھر اس پر نبؐی کو بٹھا کر معراج پر لے گئے اور معراج کا واقعہ گھڑ کے مسلمانوں پر دن میں پانچ بار پارسی نمازیں مسلط کردیں۔

لہذا قرآن کے جملے “رَعْدٌ وَّبَرْقٌ“کے معانی گرج چمک والے بادلوں کا شور اور آسمانی بجلی ہرگز نہیں بلکہ جنگ و جدل ، کپکپی طاری کرنے والا ہنگامہ ، تباہ کن جنگی ماحول ، لرزہ طاری کرنے والا تصادم اور چنگاریاں اگلتے ہوئے خطرناک ہتھیار ، تیز دھار چمکتی ہوئی تلوار اور چمکتا ہوا کوڑا ہیں ۔ اس کے علاوہ جدید دور کا آتشیں اصلحہ بھی”برق” کے معانی میں ہی آئے گا اور دور ِ جدید کے ہتھیاروں سے لیس جنگ کو بھی”رَعْدٌ” ہی کہا جائے گا۔

لہٰذا “أَوْ كَصَيِّبٍ مِّنَ السَّمَاءِ فِيهِ ظُلُمَاتٌ وَّرَعْدٌ وَّبَرْقٌ” میں بیان کیاجارہا ہے کہ ” جب ان کا تکبر ٹوٹ کر جنگ وجدل کے اندھیروں میں گرتا ہے ” ۔”جب یہ خوفناک تصادم اور چمکتی ہوئی تیزدھار تلوار کے سائے میں آسمان سے گرتے ہیں “۔”جب ان کا جاہ و جلال، ان کی شان و شوکت ، ان کا مرتبہ ، ان کا دبدبہ، ان کا ناموس لرزہ خیز جنگ اور آگ برساتے ہتھیاروں کی چھاؤں میں زمیں بوس ہوتا ہے ” ۔

تو “يَجْعَلُونَ أَصَابِعَهُمْ فِي آذَانِهِم مِّنَ الصَّوَاعِقِ حَذَرَ الْمَوْتِ ” وہ اپنا رخ خود اپنے بیانیئے سے موت کے انتباہ والے قاتل ہتھیار کی سمت میں متعین کرلیتے ہیں۔ وہ اپنا رخ اپنے اعلان عام سے موت کے خطرے والی انتہائی تباہ کن قاتل تلوار کی سمت میں متعین کرلیتے ہیں۔ وہ اپنا رخ خود اپنے اعلامیئے سے موت کے خطرے والےآلہ قتل کی سمت میں بنا لیتے ہیں۔

يَجْعَلُونَ” بنیادی لفظ “جعل” سے ماخوذ فعل “يَجْعَل” اور جمع غائب کے اسم فاعل “ونَ” کا مرکب ہے جس میں “يَجْعَل” کے معانی بنانے اور متعین کرنے کے ہیں۔ اگلا مرکب لفظ “أَصَابِعَهُمْ“ہے جس میں “هُمْ“جمع غائب کی مفعولی ضمیر ہے اور “أَصَابِع“دراصل بنیادی لفظ “صبع” سے ماخوذ ہے۔ ایڈورڈ ویلیم لین کی عربی معجم کے صفحہ 1646 پر ابو زید، صحاح اور قاموس کے حوالوں کے ساتھ “صَبَعَ” کے مندرجہ ذیل معانی دیئے گئے ہیں : “اس نے اس پر یا اس کی طرف اشارہ کیا، اپنی انگلی سے”۔ اس کے ساتھ ہی صحاح اور قاموس کے حوالوں کے ساتھ”صبع فلاناً علی فلانِ” کا جملہ “اس نے اشارے سے یا اشارہ کرکے کسی کو کسی طرف ہدایت کی ” کے معانی میں دیا گیا۔ پھر تاج العروس اور قاموس کے حوالوں کے ساتھ عربی زبان کا ایک اور جملہ “صبعه الشیطان“شیطان نے اسے ہدایت دی کے معانی میں دیا گیا ہے۔تاہم ادھر ادھر گھوم پھر کے “صَبَعَ” اور اس کے ماخوذات کو بالآخر ہدایت ، اشارہ اور نشاندہی کے معانی میں دیا گیا جو درست ہیں۔لہٰذا ہمارے زیر مطالعہ قرآن مجید کی سورۃ البقرۃ کی آیت 2:19 کے لفظ “أَصَابِعَ“کے درست معانی مندرجہ ذیل ہیں۔ ہدایت ، سمت ، رخ اوراشارہ ۔مگر ہمارے نابلد علمائے کرام نے “أَصَابِعَهُمْ“کے “أَصَابِعَ” کوانگلیوں سے تعبیر کیا جبکہ قواعد کے مطابق اعضاء اور جسم کے حصے کسی تحریروتقریر میں ادادۃ التعریف کے صیغہ “ال” کے بغیر نہیں آتے۔ اس قاعدے کی رو سے صاف ظاہر ہے کہ قرآن مجید نے “أَصَابِعَهُمْ“کے “أَصَابِعَ” کوانگلیوں کے لئے استعمال نہیں کیا۔ اس کے بعد ہمارے زیر مطالعہ آیت 2:19 میں حرف ِ جر “فِي” میں کے معانی میں آرہا ہے اور پھر “آذَانِهِم” کا مرکب “آذَان” اور جمع غائب کی مفعولی ضمیر “هِم” پر مشتمل ہے۔قرآن کی زبان سے نابلد علماء و مترجمین حضرات نے “آذَانِهِم” کی “آذَان” کو بھی کانوں سے تعبیر کیا۔ جبکہ “آذَان” اور “اَذَان” میں بہت فرق ہے۔عربی زبان کے قواعد کی رو سے کان جسمانی عضوء ہونے کی وجہ سے ادادۃ التعریف کے صیغہ “ال” کے بغیر نہیں آسکتا۔لہٰذا قرآن بھی زبان کے قواعد کو مدنظر رکھتے ہوئے اپنا بیان جاری کرتا ہے ۔اگر “آذَان” کے شروع میں آنے والے الف کو “آ” یعنی مد کے ساتھ لمبا نہ بولا جاتا اور یہ لفظ”آذَان” کی بجائے”الاذان” ہوتا تو “الاذان” کو کانوں کے معانی میں لیا جاسکتا تھا ۔مگر یہ لفظ تو وہی آذان ہے جس کی آوار دن میں پانچ بار ہرمسجد سے بلند ہوتی ہے۔ کیسی منافقت ہے کہ اگر قرآن میں “آذَان” کا لفظ آجائے تو یہ منافق اسے کان کہتے ہیں لیکن جب ان کی پانچ وقت کی پوجا کے بلاوے کے لئے یہی لفظ “آذَان” استعمال کیا جائے تو اس “آذَان” کو اس کے صحیح معانی میں اعلامیہ اور اعلانِ عام کہتے ہیں۔ جی ہاں قرآن میں آنے والے لفظ “آذَان” کے درست معانی بھی اعلامیہ ، اعلانِ عام اور بیانیہ ہیں۔ گویا سورۃ البقرۃ کی اس سے پہلی آیت 2:18 میں “عُمْيٌ” کا لفظ جو کسی شے کو لوگوں میں عام کرنے کے لئے استعمال کیا گیا ہے اس سے اگلی آیت 2:19 میں آنے والے مرکب “آذَانِهِم” کا لفظ “آذَان” بھی اسی تناظرمیں آرہا ہے کہ جو کچھ انہوں نے اکٹھا کر کے عام کیا تھا (عُمْيٌ) یہ یعنی “آذَانِهِم” انہیں کا بیانیہ ہے ، یہ انہیں کی آواز ہے، یہ انہیں کا اعلامیہ ہے اور یہ انہیں کا اعلان ہے۔ جو دراصل ان کی موت کا پروانہ ہے (مِّنَ الصَّوَاعِقِ حَذَرَ الْمَوْتِ

کچھ بدعقیدہ لوگ بلاوجہ اور بغیر کسی علم کے بحث کرتے ہیں کہ قرآن زبان کے قواعد کی پرواہ نہیں کرتا اور قرآن کا بیان زبان کے قواعد سے آذاد ہے۔ یہ لوگ شائید یہ کہنا چاہتے ہیں کہ جس نے قرآن تالیف کیا وہ زبان سے واقت نہیں تھا۔ورنہ ایک معمولی سا مصنف بھی اپنی تحریر کو باہر لانے سے پہلے ہر لحاظ سے دیکھتا ہے کہ اس میں کسی بھی زاوئیے سے کوئی کمی اور کوتاہی نہ رہ جائے ۔ کیا تمام بنی نوع انسان کے لئے لکھی جانے والی عظیم کتاب قرآن کو تیار کرتے ہوئے زبان کے قواعد کو ملحوظ خاطر نہیں رکھا گیا ہوگا؟ ۔کچھ کم علم اس مفروضے پر چلتے ہیں کہ قرآن پہلے آیا اور زبان کے قواعد بعد میں بنائے گئے۔جبکہ حقیقت یہ ہے کہ قواعد زبان کے ساتھ ہی بنتے ہیں اور الفاظ کو قواعد کے مطابق جوڑنے کانام ہی زبان ہے۔اگر الفاظ کی ترکیب قواعد سے ادھر ادھر ہوگی تو تحریراور تقریر ناکارہ اور کسی کو سمجھ میں آنے والی نہیں ہوتیں کیونکہ ایسی تحریر و تقریر زبان کے قدرتی بہاؤ سے الگ ہوجاتی ہیں اور زبان کا قدرتی بہاؤ ہی کسی زبان کے قواعد کہلاتاہے۔ کچھ کم علم لوگ دعویٰ کرتے ہیں کہ قرآن میں فارسی اور دیگر غیر عرب زبانوں کے الفاظ بھی شامل ہیں ۔یہ لوگ وہ ہیں جو اپنے شاطرانہ حیلے بہانوں سے قرآن کے بیانات کو جھٹلاتے ہیں ۔ جب قرآن نے اپنی آیت 41:44 “وَلَوْ جَعَلْنَاهُ قُرْآنًا أَعْجَمِيًّا لَّقَالُوا لَوْلَا فُصِّلَتْ آيَاتُهُ أَأَعْجَمِيٌّ وَعَرَبِيٌّ“میں خود اس بات کی صاف صاف وضاحت کردی کہ قرآن فارسی یا کسی غیر عربی زبان میں نہیں بنایا گیا تو ہم احمقوں کی طرح اپنی عقلی دلیلیں کیوں دیتے پھریں کہ قرآن میں فارسی اور فلاں فلاں زبان کے الفاظ بھی شامل ہیں ۔ہم اس سے کیا ثابت کرنا چاہتے ہیں کہ ہم بہت زیادہ عقلمند ہیں یا ہم بہت علم والے ہیں جس کا علم قرآن بنانے والے سے بھی زیادہ ہے جو خود اس بات کی تصدیق کررہا ہے کہ قرآن میں فارسی یا غیر عربی لفظ نہیں ہیں ؟۔ قرآن ایسے لوگوں کو پرلے درجے کا بے وقوف، احمق، جاہل ، منکر ، کافر اور ہٹ دھرم کہتا ہے جو قرآن کی بات کو اپنی تاویلوں سے رد کر تے ہیں۔ جو یہ کہتے ہیں کہ عربی زبان کے الفاظ کے معانی بھی وقت کے ساتھ ساتھ بدل گئے ہیں اور قرآن کے الفاظ کے معانی وہ نہیں ہیں جو عربی زبان میں سمجھے جاتے ہیں ایسے لوگ بھی احمقوں کی جنت میں رہتے ہیں ۔راقم الحروف بہت سے مضامین میں یہ حقیقت واضح کرچکا ہے کہ عربی یا قرآنی الفاظ بنیادی حروف سے ماخوذ ہیں جو قرآن کے نزول اور اس سے پہلے بھی وہی تھے اور آج بھی عربی زبان کے بنیادی حروف وہی ہیں اور ان بنیادی حروف کے معانی اب بھی وہی ہیں ۔سامی زبانوں کی یہی خوبی ہے کہ ان پر زمانے کی شکست و ریخت کا بہت زیادہ اثر نہیں ہوتا اور کوشش کرکے ان زبانوں کے الفاظ کے اصل معانی تک پہنچا جاسکتا ہے ۔عبرانی اور آرامی زبانوں کی طرح عربی بھی ایک سامی زبان ہے جس کے الفاظ اس کے بنیادی حروف سے اٹھائے جاتے ہیں ۔ البتہ سامی زبانوں کے علاوہ دیگر زبانوں کے الفاظ بنیادی حروف سے نہیں لئے جاتے اس لئے ان غیر سامی زبانوں کے الفظ میں وقت کے ساتھ ساتھ تبدیلیاں رونما ہوتی رہتی ہیں۔ بہرحال یہ سب باتیں ان لوگوں کے لئے ہیں جو کسی کی بات کو سمجھنا چاہتے ہوں یا جن لوگوں کے پاس کم ازکم اتنا علم ہوکہ کون کون سی زبانوں میں بنیادی حروف یا روٹ ورڈ کا سسٹم ہے اور کن زبانوں میں یہ سسٹم نہیں ہے اور انہیں یہ بھی پتہ ہوکہ روٹ ورڈ کیا ہوتا ہے اور کس کس زبان میں روٹ ورڈ ہوتے ہیں اور کس میں نہیں ہوتے ۔ جیسے اردو زبان میں روٹ ورڈ یا بنیادی حروف نہیں ہوتے کیونکہ اردو سب زبانوں کا مرکب ایک لشکری زبان ہے۔ مگر جو احمق روٹ ورڈ کو “روٹ میپ” کا نام دے کر “اردو” کا روٹ میپ پوچھتا پھرے ایسے بے وقوف شخص کی مثال اس بھینس کی سی ہے جس کے آ گے جنتی چاہیں بین بجائیں اس بھینس پر کوئی اثر نہیں ہوتا۔ ایسے نامراد لوگوں کو آپ کبھی بھی مطمئن نہیں کرسکتے کیونکہ یہ لوگ “النفس المطمئنه“نہیں ہوتے بلکہ جہنمی ہوتے ہیں۔

خیر ہم واپس سورۃ البقرۃ کی آیت 2:19 کے ان الفاظ “يَجْعَلُونَ أَصَابِعَهُمْ فِي آذَانِهِم“پر آتے ہیں جن کے جھوٹے تراجم ہمارے جھوٹے علمائے کرام نے مندرجہ ذیل جھوٹے الفاظ میں گھڑے ہیں۔

“ٹھونس لیتے ہیں اپنی انگلیاں کانوں میں اپنے” (ترجمہ شبیر احمد)، ” کانوں میں انگلیاں دے لیں” (ترجم فتح محمد جالندھری)، “انگلیاں اپنے کانوں میں مارے” ( ترجمہ محمودالحسن)، “اپنے کانوں میں انگلیاں ٹھونس لیتے ہیں” (ترجمہ طاہرالقادری)، “کانوں میں انگلیاں ٹھو نسے لیتے ہیں” ( ترجمہ ابوالاعلیٰ مودودی)، “کانوں میں انگلیاں ٹھونس لی جائیں” (مفہوم ۔پرویز)۔

سورۃ البقرۃ کی آیت 2:19 کے ان الفاظ “يَجْعَلُونَ أَصَابِعَهُمْ فِي آذَانِهِم” میں کونسا ایسا لفظ ہے جس کا ترجمہ دنیا کے سب سے بڑے جھوٹوں نے ” ٹھونس لیتے “، ” دے لیں “، ” مارے ” اور ” ٹھونس لی ” جیسے غیر اخلاقی الفاظ میں کیا ہے؟

أَصَابِعَهُمْ فِي آذَانِهِم” تو انگلیوں اور کانوں میں نکل گئے ۔لے دے کے “يَجْعَلُونَ” بچا جس کے فعل “يَجْعَل” کو بگاڑ کے مردودوں نے ٹھونسنا، دے لینا اور مارنا جیسے نازیبا الفاظ گھڑ کے قرآن کے تراجم میں ڈال دئیے ۔قرآن کے ساتھ کئے جانے والے ا س گھنونے کھلواڑ، بدتمیزی اور توہین کو دیکھ کر بھی جو شخص یہ کہے کہ قرآن کا حلیہ بگاڑنے والوں کو کچھ نہ کہاجائے تو یقیناً ایسا شخص بھی قرآن کی توہین کرنے والے سیاہ کاروں کا ساتھی اور توہین قرآن کی سزاء کا مستحق ہے۔یہ وہی بات ہے کہ اگر کوئی حدیث جھوٹی ثابت ہوگئی تو منافق اسے جھوٹی حدیث کہنے کی بجائے ضعیف حدیث کہہ کر لوگوں کو بے وقوف بناتے ہیں۔

کہاں ہیں وہ اہل عرب جن کے بارے میں لوگ کہتے ہیں کہ عربی ان کی اپنی زبان ہے ان کے ہوتے ہوئے قرآن کا مفہوم کوئی کیسے بگاڑ سکتا ہے؟۔ کہاں ہیں وہ لوگ جو کہتے ہیں کہ ایسا کیسے ہوسکتا ہے کہ 1400 سال سے قرآن کے ترجم غلط چلے آرہے ہوں اور انہیں کسی نے درست ہی نہ کیا ہو۔سبھی منکرین قرآن آنکھیں کھول کردیکھ لیں کہ “جعل” سے ماخوذ کئے جانے والے فعل “يَجْعَل” کو بدبختوں نے توڑ پھوڑ کے اس کے معانی کو کیسے بگاڑا ؟۔کوئی عربی دان اور اہل زبان عرب یہ ثابت کردے کہ کیا عربی زبان میں “يَجْعَل” کے معانی ٹھونسنا، دے لینا اور مارنا ہوتے ہیں؟۔

جھوٹے عقائد اور جھوٹے تراجم کی بنیاد پر اعتراض اٹھانے والے بھی بدبختوں کے ساتھی بدبخت اور مردود ہیں ۔لہٰذا معترضین حضرات سے گزارش ہے کہ صرف تکنیکی بنیادوں پر اپنے اعتراضات اٹھائیں اور اپنے اعتراضات میں مدلل علمی بات کریں ۔ احمقوں کے تراجم اور قرآن کے نام پر گھڑی ہو ئیں خرافات کے حوالے دینے سے گریز گریں ۔راقم الحروف کو کوئی حوالہ دیکھنے کی ضرورت نہیں ہے کیونکہ قرآن کے نام پر جو خرافات جس نے گھڑی ہیں وہ سب حرف بحرف راقم الحروف کے علم میں ہیں۔

سورۃ البقرۃ کی آیت 2:19 میں”يَجْعَلُونَ أَصَابِعَهُمْ فِي آذَانِهِم” کے بعد حرف جر “مِّنَ” بمعنی “کے” آرہا ہے اور اس کے بعد “الصَّوَاعِقِ ” معروف حالت میں”صعق” کا اسم فاعل ہے اور عربی زبان کا بنیادی لفظ “صعق” مرجانا ، صدمہ پہنچنا، بیہوش ہوجانا ، غش کھا کے گرجانا، فرسودگی، اور پژمردگی کے معانی میں ہے ۔”صاعقه“اگر عربی زبان کا لفظ ہوگا تو وہ غش آور، قاتل ہتھیار ، قاتل تلوار اور مارنے والا آلہ ہوگا جیسے کیڑے مار مشین (zapper) کو عربی میں “صاعقه“کہا جاتاہے۔جبکہ یہی لفظ ۔”صاعقه“اگر فارسی زبان کا ہوگا تو اس کے معانی بجلی ہوں گے۔اردو میں عورتوں کا نام”صاعقه” فارسی زبان سے لیا گیا ہے۔ عربی “صاعقه” صدمہ پہنچانے والی اور مارنے والی شے ہے ۔ایڈورڈویلیم لین کی عربی معجم کے صفحہ 1690 پر صحاح ، قاموس اور الصاغاني کی اوباب کے حوالوں کے ساتھ”صعق“اور اس کے اسم”صاعقه” کو ہاتھ کے ساتھ ، چھڑی کے ساتھ یا کسی ہتھیار کے ساتھ مارنے کے معانی میں دیا گیا ہے۔ اچانک درد سے کسی کے حواس پر اثر انداز ہونا جیسے کسی کو مفلوج کردینا ، کسی کے ضمیر نے اسے ماردیا ، کسی کو دہشت گردی کا نشانہ بنایا گیا یا کسی ہتھیار یا ہاتھ سے شدید دھچکا لگا نا بھی “صعق” اور “صاعقه” کے معانی میں دیا گیا ہے۔اس کے علاوہ صحاح ، تاج العروس اور البداوی کے قرآنی بیان کے حوالوں کے ساتھ”صعق” کا مطلب مرنا، مردہ اور موت دیا گیا ہے۔ اس ساتھ ہی تاج العروس کے حوالے سے”اصعقه“کے معانی مارڈالا اور قتل کیا بتائے گئے ہیں۔

لہٰذا ہمارے زیر مطالعہ سورۃ البقرۃ کی آیت 2:19 کے لفظ “الصَّوَاعِقِ“کے درست معانی ہیں تیز رفتارقاتل ، تیزرفتار قتل کا ہتھیار ، مارنے والی تیز تلوار ، اچانک ہلاکت کا آلہ یا اچانک مارنے والی شے اور صدمہ پہنچانے والی شے۔

اگلا لفظ “حَذَرَ” انتباہ ، خطرہ، خطرے سے آگاہی، خبردار ، احتیاط ، آگاہ ، محتاط ، ہوشیار ، گرفت میں آنا ، سمجھنا ، باہر دیکھنا ، احتیاط برتنا ، خطرے سے بچنے کے لئے محتاط ہونا اور توجہ دینا کے معانی میں استعمال کیا جاتا ہے۔”الْمَوْتِ” کے معانی آپ سب جانتے ہیں اردو میں بھی مرنے کو موت ہی کہا جاتا ہے۔ “وَاللّهُ مُحِيطٌ بِالْكَافِرِينَ ” اور اللہ منکرین کو سب اطراف سے گھیرے ہوئے ہے۔”مُحِيطٌ” ح ط ط سے ماخوذ اسم الفاعل ہے۔

قرآن مجید کی سورۃ البقرۃ کی آیت 2:19 کا لفظ بلفظ درست ترجمہ ملاحظہ فرمائیں۔

أَوْ كَصَيِّبٍ مِّنَ السَّمَاءِ فِيهِ ظُلُمَاتٌ وَّرَعْدٌ وَّبَرْقٌ يَجْعَلُونَ أَصَابِعَهُمْ فِي آذَانِهِم مِّنَ الصَّوَاعِقِ حَذَرَ الْمَوْتِ وَاللّهُ مُحِيطٌ بِالْكَافِرِينَ“(2:19)

” یا جیسے ہی ان کا تکبر ٹوٹ کر جنگ وجدل کے اندھیروں میں گرتا ہے وہ اپنا رخ خود اپنے بیانیئے سے موت کے انتباہ والے قاتل ہتھیار کی سمت میں بناتے ہیں اور اللہ منکرین کو سب اطراف سے گھیرے ہوئے ہے “

(سورۃ البقرۃ کی آیت 2:19 کا لفظ بلفظ درست ترجمہ)

” یا جب یہ خوفناک تصادم اور چمکتی ہوئی تیزدھار تلوار کے سائے میں آسمان سے گرتے ہیں وہ اپنا رخ اپنے اعلان عام سے موت کے خطرے والی انتہائی تباہ کن قاتل تلوار کی سمت میں متعین کرلیتے ہیں اور اللہ منکرین کو سب اطراف سے گھیرے ہوئے ہے “

(سورۃ البقرۃ کی آیت 2:19 کا لفظ بلفظ اصل کلاسیکی ادبی ترجمہ)

” یا جب ان کا جاہ و جلال، ان کی شان و شوکت ، ان کا مرتبہ ، ان کا دبدبہ، ان کا ناموس لرزہ خیز جنگ اور آگ برساتے ہتھیاروں کی چھاؤں میں زمیں بوس ہوتا ہے وہ اپنا رخ خود اپنے اعلامیئے سے موت کے خطرے والےآلہ قتل کی سمت میں متعین کرلیتے ہیں ” (سورۃ البقرۃ کی آیت 2:19 کا لفظ بلفظ جدید دور کا درست تفصیلی ترجمہ)

آپکا خیر اندیش

کاشف خان